| | | |  


بِسْمِ اللهِ الرَّ حْمٰنِ الرَّ حِیْم

کتاب الاخلاق

ترک فضولیات(۲۷۰)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے اسلام کی بہتر باتوں میں سے یہ ہے کہ آدمی بیکار اور فضول چیزوں کو چھوڑدے۔ (ترمذی۔ ابن ماجہ)
ہدایت(۲۷۱)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے میں اس واسطے بھیجا گیا کہ اخلاق کی خوبیوں کو پورا کردوں۔ (مسند احمد)
   (۲۷۲)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے وہ آدمی زور آور نہیں ہے جو کشتی میں لوگوں کو پچھاڑ دے، زور آور وہ ہے جو اپنے نفس پر قابو رکھے غصہ کے وقت۔ (موطا)
   (۲۷۳)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے مومنین میں ایمان کے کامل وہ لوگ ہیں جن کے اخلاق اچھے ہیں۔ (ابوداؤد۔ ترمذی)
غنی کون ہے(۲۷۴)ابوہریرہسے روایت ہے رسول الله ﷺنے مجھے پانچ باتیں تعلیم فرمائیں۔ (۱)ان چیزوں سے اپنے آپ کو بچا جن کو الله تعالیٰ نے حرام قراردیا ہے اگر تو ان سے بچے گا تو تیرا شمار بہترین لوگوں میں ہوگا۔ (۲)جو چیز الله تعالیٰ نے تیری قسمت میں لکھ دی ہے اس پر راضی اور شاکر رہ اگر تو ایسا کرتے گا تو دنیا کے غنی لوگوں میں تیرا شمار ہوگا۔ (۳)اپنے ہمسایہ پڑوسی سے اچھا سلوک کر اگر تو ایسا کرےگا تو تیرا ایمان کامل ہوگا۔ (۴)جو چیز تو اپنے لئے پسند کرتا ہے دوسروں کے لئے بھی پسند کر اگر تو ایسا کرے گا تو سچا مسلمان ہوگا۔ (۵)زیادہ نہ ہنسا کر اس لئے کہ زیادہ ہنسنا دل کو مردہ بنادیتا ہے۔ (ترمذی)
مفلس کون ہے(۲۷۵)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے تم جانتے ہو مفلس کون ہے؟ صحابہ نے عرض کیا مفلس وہ ہے جس کے پاس نہ روپیہ پیسہ ہو اور نہ سامان و اسباب۔ فرمایا میری امت میں سے قیامت کے دن مفلس وہ شخص ہوگا جو دنیا میں نماز روزہ زکوٰة وغیرہ ہر قسم کی عبادتیں لے کر آئے گا اور ساتھ ہی کسی کو گالی دینے کسی پھر تہمت لگانے کسی کا مال کھاجانے، کسی کو ناحق مارنے کے گناہ بھی لائے گا۔ پھر ایک مظلوم کو اس کی ان نیکیوں میں سے بدلہ دیا جائے گا اور دوسرے مظلوم کو ان نیکیوں میں سے بدلہ دیا جائیگا جب اس کی سب نیکیاں ختم ہوجائیں گی اور لوگوں کے حق باقی رہ جائیں گے تو ان حق داروں کی برائیاں اور گناہ اس پر ڈل دیئے جائیں گے اور پھر اس کو دوزخ میں ڈال دیا جائے گا۔ (مسلم)
نجات اور ہلاکت (۲۷۶)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے تین چیزیں نجات دینے والی ہیں ا ور تین چیزیں ہلاک کرنے والی ہیں، جب نجات دینے والی ان میں ایک تو ظاہر و باطن میں الله تعالیٰ سے ڈرنا، دوسرے خوشی یا ناخوشی کی ہر حالت میں حق بات کہنا، تیسرے امیری اور فقیری دونوں حالتوں میں میانہ روی اختیار کرنا ہے، ہلاک کرنے والی چیزیں میں پہلی وہ خواہش نفس ہےجس کا اتباع کیا جائے دوسری وہ حرص و بخل ہے کس کا انسان غلام بن جائے تیسرے خود کو دوسروں سے برتر بہتر سمجھنا۔ (بیہقی)
تواضع(۲۷۷)حضرت عمرنے منبر پر خطبہ میں فرمایا لوگو! تواضع اور فروتنی اختیار کرنا میں نے رسول الله ﷺکو یہ فرماتے سنا ہے کہ جو شخص الله تعالیٰ کی رضامندی حاصل کرنے کے لئے تواضع اور فروتنی سے کام لے الله تعالیٰ اس کے مرتبہ کو بلند کردیتا ہے۔ جو شخص تکبر و غرور کرتا ہے الله تعالیٰ اس کو لوگوں کی نگاہ میں کتے اور سور سے بھی بدتر ردیتا ہے۔ (بیہقی)
تکبّر(۲۷۸)ابن مسعودسے روایت ہے رسول الله ﷺنے فرمایا جس شخص کے قلب میں ذرہ برابر بھی تکبر ہوگا، وہ جنت میں نہ جائے گا۔ ایک شخص نے عرض کیا ہر شخص اس بات کو پسند کرتا ہے کہ اس کا لباس اچھا ہو تو کیا پھر یہ چیز تکبر ہوگی؟ فرمایا لوگوں کو حقیر و ذلیل سمجھنا تکبر ہے۔ (مسلم)
اخلاق حسنہ(۲۷۹)معاذسے روایت ہے جب میں یمن جانے لگا تو رسول الله ﷺنے مجھے ہدایت فرمائی کہ لوگوں کی تعلیم و تربیت کے لئے اپنے اخلاق کو اچھا بنا۔ (موطا)
   (۲۸۰)ابی ثعلبہسے روایت ہے رسول الله ﷺنے فرمایا قیامت کے دن مجھ کو سب سے زیادہ عزیز و محبوب اورر مجھ سے قریب تر وہ لوگ ہوں گے جو تم میں زیادہ خوش اخلاق ہوں اور مجھ سے بہت دور وہ لوگ ہوں گے جو بداخلاق اور تکبر کرنے والے ہیں۔ (بیہقی)
ریاکار(۲۸۱)جندبسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے جو شخص کوئی عمل محض لوگوں کو دکھانے اور شہرت حاصل کرنے کے لئے کرے الله تعالیٰ اس کو ریاکاری کی سزا دکھائے گا۔ (بخاری و مسلم)
توفیق الٰہی(۲۸۲)انسسے روایت ہے رسول الله ﷺنے فرمایا الله تعالیٰ جب کسی بندے کے ساتھ بھلائی کا ارادہ کرتا تو اس کو اعمال نیک کی توفیق عطا فرماتا ہے۔ (ترمذی)
بہترین عادت(۲۸۳)عبدالله بن عمرسے روایت ہے ایک شخص نے رسول الله ﷺسے پوچھا اسلام کی کون سی عادت بہتر ہے؟ فرمایا کھانا کھلانا اور آشنا ناآشنا سب کو سلام کرنا۔ (بخاری و مسلم)
   (۲۸۴)انسسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے جب تم گھر میں داخل ہو تو گھر والوں کو سلام کرو تمہارے لئے اور تمہارے گھر والوں کے لئے سلام برکت کا موجب ہوگا۔ (ترمذی)
   (۲۸۵)عبدالله بن عمرسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے سلام میں پہل کرنے والا تکبر سے پاک ہے۔ (بیہقی)
ہدایت(۲۸۶)عطاءسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے آپس میں بعد سلام کے مصافحہ کرو کیونکہ اس سے بغض اور کینہ دور ہوتا ہے اور ایک دوسرے کو تحفہ بھیجا کرو اس سے محبت بڑھتی ہے اور دشمنی جاتی رہتی ہے۔ (موطا)
تہمت(۲۸۷)ابی ذرسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے کوئی شخص کسی شخص پر نہ تو فسق کی تہمت لگائے نہ کفر کی اس لئے کہ اگر وہ ایسا نہیں ہے تو یہ کلمہ کہنے والے پر لوٹ پڑے گا۔ (بخاری)
صدق و کذب(۲۸۸)عبدالله بن مسعودسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے سچ بولنا اختیار کرو۔ اس لئے کہ سچ بولنا نیکی کا راستہ دکھاتا ہے اور نیکی جنت میں لے جاتی ہے، جوشخص ہمیشہ سچ بولتا ہے الله تعالیٰ کے نزدیک صدیقوں میں لکھا جاتا ہے اور بچو تم جھوٹ بولنے سے اس لئے کہ جھوٹ فسق و فجور کی طرف لے جاتا ہے اور فسق و فجور دوزخ کی طرف رہنمائی کرتا، جو شخص ہمیشہ جھوٹ بولتا ہے وہ الله تعالیٰ کے نزدیک کذاب لکھا جاتا ہے۔ (بخاری و مسلم)
منافق (۲۸۹)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے تم قیامت کے دن بدترین لوگوں میں ان کو پاؤ گے جو دومنہ رکھنے والے منافق ہوں گے یعنی منہ دیکھی بات کرنے والے کس کے پاس اس کی سی بات کہیں۔ (بخاری و مسلم)
چغل خور (۲۹۰)حذیفہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے چغل خور جنت میں نہ جائیں گے۔ (بخاری و مسلم)
غیبت و بہتان(۲۹۱)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے اگر تو نے اپنے مسلمان بھائی کی وہ برائی بیان کی جو اس میں موجود ہے تو یہ غیبت ہے اور اگر تو نے اس کی نسبت ایسی بات کہی جو اس میں موجود نہیں تو یہ بہتان ہے۔ (مشکوٰة)
دوزبان(۲۹۲)عمارسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے جو شخص دو زبان ہو یعنی کسی سے کچھ کہتا ہو اور کسی سے کچھ، قیامت کے دن اس کے منہ میں آگ کی دوزبانیں ہوں گی۔ (دارمی)
خیانت(۲۹۳)سفیان بن اسدسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے سب سے بڑی خیات یہ ہے کہ تو اپنے مسلمان بھائی سے کوئی بات کہے اور وہ اس بات کو سچ اور درست سمجھے اور حیقیقت میں تو نے اس سے جھوٹی بات کہی ہو۔ (ابوداؤد)
چند نصائح(۲۹۴)عبادہ بن صامتسے روایت ہے رسول الله ﷺنے فرمایا کہ تم چند باتوں کا میرے سامنے عہد کرو کہ میں تمہارے لئے جنت کا ضامن بن جاؤں گا۔ باتیں کرو تو سچ بولو۔ وعدہ کرو تو اس کو پورا کرو تمہارے پاس امانت رکھی جائے تو امانت کو ادا کرو۔ اپنی شرم گاہوں کی حفاظت کرو۔ نگاہ کو نیچا اور ہاتھوں کو قابو میں رکھو۔ (بیہقی۔ مسند احمد)
بدترین لوگ(۲۹۵)عبدالرحمٰنبن غنم سے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے الله تعالیٰ کے بہترین بندے وہ ہیں جن کو دیکھ کر الله یاد آئے اور بدترین بندے وہ ہیں جو چغلیاں کھاتے پھرتے ہیں، دوستوں کے درمیان جدائی ڈالتے ہیں اور پاک لوگوں سے فساد و گناہ کے متوقع رہتے ہیں۔ (احمد۔ بیہقی)
ممانعت(۲۹۶)عبدالله بن عمرسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے اپنے ماں اپ کو گالی دینا کبیرہ گناہ ہے، صحابہ نے عرض کیا یارسول الله ﷺکیا آدمی اپنے ماں باپ کو گالی دے سکتا ہے؟ فرمایا ہاں کوئی شخص کسی کے ماں باپ کو گالی دیتا تو وہ اپنے ماں باپ کو گالی دیتا ہے۔ (بخاری و مسلم)
ماں کی فرمانبرداری(۲۹۷)مغیرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے الله تعالیٰ نے تم پر اپنی ماں کی نافرمانی اور ایذارسانی کو حرام قرار دیتا ہے۔ (بخاری)
ہدایت (۲۹۸)انسسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے جو شخص یہ چاہتا ہے کہ اس کی روزی میں وسعت اور اس کی موت میں تاخیر کی جائے اس کو چاہیے کہ وہ اپنے رشتہ داروں سے اچھاسلوک کرے۔ (بخاری۔مسلم)
   (۲۹۹)جبیر بن مطعمسے روایت ہے فرمایا رسول ا ﷺنے رشتہ داری کو قطع کرنے والا جنت میں داخل نہ ہوگا۔ (بخاری)
باپ کی اطاعت(۳۰۰)عبدالله بن عمرسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے پروردگار کی رضامندی باپ کی رضامندی میں ہےاور پروردگار کی ناخوشی باپ کی ناخوشی میں ہے۔ (ترمذی)
ماں کی خدمت (۳۰۱)معاویہ بن جاہمہسے روایت ہے کہ جاہمہنے رسول الله ﷺکی خدمت میں حاضر ہو کر عرض کیا کہ میں نے جہاد پر جانے کا ارادہ کیا ہے، فرمایا کیا تیری ماں زندہ ہے؟ اس نے کہا ہاں، فرمایا ماں کی خدمت کو اختیار کر اس لئے کہ جنت ماں کے قدموں میں ہے۔ (احمد۔ نسائی۔ بیہقی)
ہدایت (۳۰۲)ابی اُسید ساعدیسے روایت ہے رسول الله ﷺکی خدمت میں ایک شخص نے عرض کیا کہ جب تک میرے ماں باپ زندہ رہے میں نے ان کے ساتھ سلوک کیا، اب بھی کوئی سبیل ایسی ہے کہ میں ان سے سلوک کرتا رہوں؟ فرمایا ہاں ان کے لئے دعاء مغفرت کرنا۔ ان کی وصیت پوری کرنا، ان کے قرابت داروں سے سلوک کرنا اور ان کے دوستوں کی عزت کرنا۔ (ابوداؤد۔ ابن ماجہ)
   (۳۰۳)ابی ہریرہسے روایت ہے رسول الله ﷺکی خدمت میں ایک شخص نے عرض کیا میرے قرابت دار ایسے ہیں کہ میں ان کےساتھ سلوک کرتا ہوں لیکن وہ میرے ساتھ سلوک نہیں کرتے ہیں ان کے ساتھ احسان کرتا ہوں وہ مجھ سے برائی کرتے ہیں، علم و بردباری سے کام لیتا ہوں اور ان سے درگزرکرتا ہوں مگر وہ جہالت سے پیش آتے ہیں فرمایا اگر تو ایسا ہی کرتا ہے جیساکہ تو نے بیان کیا تو گویا تو ان کو گرم راکھ پھنکاتا ہے اور تیرے ساتھ الله تعالیٰ کی مدد ہے وہ ان کی اذیتوں اور شر کو تجھ سے دفع کرنے والا ہے جب تک تو اسی صفت پر رہے۔ (مسلم)
   (۳۰۴)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنےالله تعالیٰ قیامت کے دن فرمائیگا کہاں ہیں وہ لوگ جو میری خوشنودی حاصل کرنے کے لئے آپس میں محبت رکھتے تھے آج میں ان کو اپنے سایہٴ رحمت میں جگہ دوں گا اور آج میرے سایہ کے سوا کوئی سایہ نہیں۔ (مسلم)
   (۳۰۵)ابی ایوب انصاریسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے کسی مسلمان کے لئے یہ بات جائز نہیں کہ وہ تین دن سے زیادہ آپس میں خفگی رکھے اور ایک دوسرے کو دیکھ کر منہ پھیر لے، باہمی خفگی والے دو شخصوں میں بہتر وہ ہے جو مصالحت کی ابتدا کرے۔ (بخاری و مسلم)
حسد(۳۰۶)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے حسد سے اپنے آپ کو بچاؤ اس لئے کہ حسد نیکیوں کو کھاجاتا ہے جس طرح آگ لکڑیوں کو کھاجاتی ہے۔ (ابوداؤد)
فساد (۳۰۷)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے بچاؤ خود کو دو مسلمانوں میں فساد ڈلوانے سے اس لئے کہ یہ فعل دین کو تباہ کرنے والا ہے۔ (ترمذی)
مکر (۳۰۸)حضرت ابی بکر الصدیقسے روایت ہے رسول الله ﷺنے فرمایا کہ وہ شخص ملعون ہے جو کسی مسلمان کو ضرر پہنچائے یا کسی کے ساتھ مکر کرے۔ (ترمذی)
ہدایت (۳۰۹)ابن عمرسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے مسلمان سب آپس میں بھائی بھائی ہیں پس کوئی مسلمان نہ تو کسی مسلمان بھائی پر ظلم کرے اور نہ اس کو ہلاکت میں ڈالے جو شخص کسی مصیبت زدہ حاجت مند مسلمان بھائی کی ہر ممکن مدد کرے گا قیامت کے دن الله تعالیٰ اس پر رحم فرمائے گا۔ (بخاری و مسلم)
   (۳۱۰)جریر بن عبداللهسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنےالله تعالیٰ اس شخص پر رحم نہیں فرماتا جو لوگوں پر رحم نہیں کرتا۔ (بخاری ومسلم)
   (۳۱۱)انسسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے وہ شخص جنت میں نہ جائے گا جس کے پڑوسی اس کی برائیوں سے مامون و محفوظ نہ ہوں۔ (مسلم)
   (۳۱۲)انسسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے جس جوان نے کسی بوڑھے مسلمان کی اس کے بڑھاپے کے سبب تعظیم و تکریم کی الله تعالیٰ اس کے بڑھاپے کے وقت لوگوں سے اس کی تعظیم و تکریم کرائے گا۔ (ترمذی)
   (۳۱۳)سعید بن العاصسے روایت فرمایا رسول الله ﷺنے بڑے بھائی کا حق چھوٹے بھائی پر ایسا ہے جیسا کہ باپ کا حق بیٹے پر۔ (بیہقی)
والدین کی نافرمانی(۳۱۴)ابی بکرہسے روایت ہے فرمایا رسو ل الله ﷺنے ہر گناہ بجز شرک کے الله تعالیٰ بخش دیتا ہے مگر ماں باپ کی نافرمانی کے گناہ کو نہیں بخشتا بلکہ الله تعالیٰ اس کی سزا دنیا ہی میں مرنے سے پہلے اس کو دے دیتا ہے۔ (بیہقی)
حسن سلوک(۳۱۵)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے بیوہ عورت اور مسکین کی خبرگیری کرنے والا الله تعالیٰ کے نزدیک صائم الدہرشب بیدارعابد کے برابر ہے۔ (بخاری و مسلم)
   (۳۱۶)ابی ہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے مسلمان گھروں میں بہترین گھر وہ ہے جس میں کوئی یتیم بچہ ہو اور اس کے ساتھ احسان و سلوک کیا جائے اور بدترین گھر وہ ہے جس میں یتیم بچہ ہو اس کے ساتھ برا برتاؤ کیا جائے۔
   (۳۱۷)ابن عباسسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے وہ شخص کامل مومن نہیں ہے جو پیٹ بھر کر کھائے اور اس کاہمسایہ پڑوسی بھوکا ہو۔ (بیہقی)
توکل(۳۱۸)حضرت عمر بن خطابسے روایت ہے رسول الله ﷺنے فرمایا اگر تم الله تعالیٰ پر بھروسہ کرلو ایسا بھروسہ جیسا کہ بھروسا کا حق ہے تو وہ تم کو اس طرح رزق دیگا جس طرح پرندوں کو رزق دیتا ہے وہ صبح کو بھوکے نکلتے ہیں اور شام کو پیٹ بھرے اپنے گھونسلوں میں جاتے ہیں۔ (ترمذی۔ ابن ماجہ)
   (۳۱۹)ابی ذرسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے ترک دنیا حلال کو حرام بنانے اور مال کو ضائع کرنے کا نام نہیں ہے بلکہ زہدیہ ہے کہ جو کچھ تیرے ہاتھوں میں ہے اس پر بھروسہ نہ کر، اس پر بھروسہ کر جو پروردگار کے ہاتھوں میں ہے۔ (ترمذی۔ ابن ماجہ)
صبر وشکر(۳۲۰)صہیبسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے مومن کی شان عجیب ہے اس کے سب کام نیکی ہیں، اگر اس کو خوشی اور خوش حالی حاصل ہے تو الله تعالیٰ کی شکرگزاری کرتا ہے اور جب کوئی مصیبت پہنچے تو صبر کرتا ہے اور یہ شکر و صبر بہت بڑی نیکی ہے۔ (مسلم)
استغناء(۳۲۱)ابی ہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے اسباب و سامان کی زیادتی پر ہی غنا کا انحصار نہیں، مال و دولت ہو یا نہ ہو دل غنی ہونا چاہیے۔ (بخاری و مسلم)
دنیا پرست(۳۲۲)ابی امامہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے قیامت کے دن مرتبہ کے لحاظ سے بدترین وہ بندہ ہوگا جس نے اپنی آخرت کو دنیا حاصل کرنے کے لئے خراب کردیا۔ (ابن ماجہ)
خوش اخلاقی(۳۲۳)حارثہبن وہب، ابی دادرمہ۔ ابی ذرسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے قیامت کے دن بندہٴ مومن کے اعمال ترازو میں رکھے جائیں گے ان میں سب سے وزنی چیز خوش اخلاقی اور خوش کلامی ہوگی، فحش بکواس کرنے والے بیہودہ گو اشخاص جنت میں داخل نہ ہوں گے۔ (ابوداؤد، ترمذی، دارمی)
حیاء(۳۲۴)ابی امامہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے حیا اور زبان کو قابو میں رکھنا ایمان کی دو شاخیں ہیں اور فحش گوئی بیہودہ باتیں نفاق کی دو شاخیں ہیں۔ (ترمذی)
شاعری (۳۲۵)ابی سعید خدریسے روایت ہے ایک شاعر، رسول الله ﷺکے سامنے شعر گاتا ہوا آیا۔ رسول الله ﷺنے فرمایا اس شیطان کو روک لو، انسان کا پیٹ پیپ سے بھر لینا اس سے بہتر ہے کہ اس میں اشعار بھرے ہوں۔ (مسلم)
گانا (۳۲۶)جابرسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے گانا اس طرح دل میں نفاق پیدا کرتا ہے جس طرح پانی کھیتی کو اگاتا ہے۔ (بیہقی)
ادب (۳۲۷)عمر بن شعیبسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے دو آدمیوں کے درمیان نہ بیٹھو جب تک ان سے اجازت نہ حاصل کرلو۔ (ابوداؤد)
   (۳۲۸)ابن عمرسے روایت ہے رسول الله ﷺنے مردوں کو عورتوں کے درمیان چلنے کی ممانعت فرمائی ہے۔ (ابوداؤد)
   (۳۲۹)ابو اُسید انصاریسے روایت ہے رسول الله ﷺمسجد میں نکل رہے تھے راستہ میں مرد اور عورتیں مخلوط ہوکر چلنے لگے رسول الله ﷺنے عورتوں کو حکم دیا کہ تم مردوں کے پیچھے چلو تم کو راستہ کے درمیان مردوں میں مخلوط ہوکر چلنا مناسب نہیں، تم کنارے کنارے آیا جایا کرو، یہ حکم سن کر عورتیں راستہ کے کنارے دیواروں سے متصل چلنے لگیں۔ (بیہقی)
   (۳۳۰)ابی ہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے حیا ایمان کا ایک جز ہے اور ایمان دار جنت میں جائے گا، بے حیائی بدی میں سے ہے اور بدکار دوزخ میں جائے گا۔ (ترمذی)
مہمان نوازی (۳۳۱)ابی شریح کعبیسے روایت ہے رسول الله ﷺنے فرمایا جو شخص الله اور آخرت پر ایمان رکھتا ہو اس کو چاہیے کہ وہ اپنے مہمان کی عزت کرے، خاطر و مدارات اور تکلفات کی مدّت ایک دن اور ایک رات ہے اور عام ضیافت کی مدّت تین دن اورتین رات ہے، اس کے بعد کی مہمان نوازی خیرات ہے۔ مہمان کو چاہیے کہ وہ اپنے میزبان کو اپنے زیادہ عرصہ تک ٹھہرنے سے زیر بارنہ کرے۔ (بخاری و مسلم)
   (۳۳۲)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے اپنے مہمان کا استقبال دروازے سے باہر نکل کر کرو یا رخصت کے وقت دروازے تک پہنچاؤ۔ (ابن ماجہ)
برکت(۳۳۳)حضرت عمر بن خطابسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے سب لوگ مل کر کھانا کھایا کرو اس لئے کہ جماعت میں برکت ہوتی ہے۔ (ابن ماجہ)
   (۳۳۴)وحشیبن حرب سے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے سب لوگ جمع ہوکر کھانا کھایا کرو اور الله کا نام لیکر یعنی بسم الله کہہ کر کھانا شروع کیا کرو تمہارے لئے اس میں برکت دی جائے گی۔ (ابوداؤد)
   (۳۳۵)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے دو شخصوں کا کھانا تین شخصوں کے لئے کافی ہے اور تین شخصوں کا کھانا چار شخصوں کو کفایت کرتا ہے۔ (بخاری و مسلم)
شکر الٰہی (۳۳۶)ابوہریرہسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے کھانا کھا کر شکر الٰہی ادا کرنے والا صابرروزہ دار کی مانند ہے۔ (ترمذی، ابن ماجہ، دارمی)
نیکی(۳۳۷)ثوبانسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے تقدیر الٰہی کو کوئی چیز نہیں بدلتی مگر دعاء اور عمر کو کوئی چیز نہیں بڑھاتی مگر نیکی اور انسان کو روزی سے محروم نہیں کیا جاتا مگر اس گناہ کے سبب جس کا اس نے ارتکاب کیا ہے۔ (ابن ماجہ)
چند نصائح (۳۳۸)ابی ذرسے روایت ہے کہ میں نے رسول الله ﷺکی خدمت مبارک میں حاضر ہو کر عرض کیا یارسول الله ﷺمجھ کو نصیحت فرمائیے، ارشاد ہوا میں تجھ کو الله جل جلالہ سے ڈرنے کی نصیحت کرتا ہوں اس لئے کہ الله تعالیٰ سے ڈرتے رہنا تیرے سب دینی و دنیاوی کاموں کی درستی و آراستگی کا باعث ہوگا۔ اور قرآن مجید کی تلاوت اور ذکر الٰہی کو اپنے لئے ضروری و لازمی قرار دے لے اس لئےکہ الله کا ذکر عالم بالا میں فرشتوں کے درمیان تیرے تذکرہ کا موجب ہوگا اور تیرے دل کو نورومعرفت الٰہی سے بھر دے گا اور فضول و بے ضرورت گفتگو سے احتراز کر اسلئے کہ خاموشی میں تجھے اموردین میں غور کرنے اور عجائبات قدرت میں فکر کرنے کا موقع ملے گا اور زیادہ ہنسنے سے پرہیز کر اس لئے کہ زیادہ ہنسنا دل کو مردہ کردیتا ہے اور چہرہ کی شگفتگی کو زائل کردیتا ہے اور ہمیشہ سچی بات کہا کر اور دینی امور کے معاملے میں کسی کی ملامت سے نہ ڈراکر، اور جب کسی کی عیب گیری کا خیال تیرے دل میں پیدا ہوتو اپنے عیوب پر نظر ڈالا کر (بیہقی)
ہدایت(۳۳۹)انسسے روایت ہے فرمایا رسول الله ﷺنے اپنے مسلمان بھائی کی ہر ممکن مدد کرو خواہ وہ ظالم ہو یا مظلوم۔ ایک شخص نے عرض کیا یارسول اللهﷺ! مظلوم کی مدد تو میں کرتا ہوں ظالم کی مدد کس طرح کروں؟ فرمایا تو ظالم کو ظلم کرنے سے روک تیرا اس کو ظلم سے باز رکھنا ہی مدد ہے۔ (بخاری و مسلم)